Camera mounted in police uniform

وفاقی دارالحکومت اسلام آباد کی نے شہریوں کی شکایات کو مدنظر رکھتے ہوئے پولیس ناکوں پر کرپشن کے خاتمہ کے لیے ناکوں پر تعینات اہلکاروں کی وردی میں کیمروں کا استعمال شروع کردیا۔

تفصیلا ت کے مطابق آئی جی اسلام آبادعامر ذوالفقار کی ہدایت پر ابتدائی طور پر 10 کیمرے اہل کاروں کے حوالے کر دیے گئے، یہ کیمرے شہریوں اور ڈیوٹی پر مامور پولیس اہلکار کے درمیان ہونے والی گفتگو ریکارڈ کریں گے جبکہ ناکوں پر ریکارڈ شدہ ویڈیو روزانہ کی بنیاد پر زونل ایس پی کے دفتر میں محفوظ ہوگی۔آئی جی اسلام آباد عامر ذولفقار نے ڈی آئی جی آپریشن وقار الدین سید کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ کہ پولیس نے ابتدائی طوپر اپنی مدد آپ کے تحت 10 کیمرے خرید کر لگائے ہیں۔عامر ذولفقار نے کہا کہ کیمرے ناکوں پر کھڑے پولیس اہلکاروں کے یونیفارم پر نصب کیے گئے ہیں۔آئی جی اسلام آباد عامر ذولفقار نے  مزید کہا کہ مستقبل میں ان کیمروں سے لاء اینڈ آرڈر جیسے موقعوں پر بھی مدد حاصل کی جاسکے گی جبکہ کیمروں کو سیف سٹی پراجیکٹ کے ساتھ بھی منسلک کیاجائے گا۔

علاوہ ازیں آئی جی اسلام آباد محمد عامر ذوالفقار خان  نے وفاقی وزیر داخلہ اعجاز شاہ سے ملاقات کی

اور انہیں   پولیس اہلکاروں کی وردی میں نصب کیمرے کے بارے میں  بریفنگ دی۔محمد عامر ذوالفقار خان   نے کہا کہ ابتدائی طور پر چند منتخب ناکوں پر تعینات اہلکاروں نے ٹریننگ مکمل کرنے کے بعد وردی پر لگے کیمروں کا استعمال شروع کردیا ہے جس سے شہریوں اور ڈیوٹی پر مامور پولیس اہلکار کے درمیان گفتگو ریکارڈ ہوگی۔آئی جی اسلام آباد نے یہ بھی کہا   کہ ابتدائی طور پر صرف دس کیمرے خریدے گئے ہیں جبکہ کیمروں کے فوائد کے بارے میں بتایا اور کہا کہ وردی پر نصب شدہ ویڈیو کیمرے اندھیرے میں بھی ویڈیو بنانے کی مکمل صلاحیت رکھتے ہیں۔وفاقی دارالحکومت کا پولیس اہلکاروں کی وردی پر کیمرہ نصب کرنے کا فیصلہآئی جی اسلام آباد محمد عامر ذوالفقار خان  نے مزید کہا کہ نصب کیے گئے کیمرے شہریوں اور ڈیوٹی پر مامور پولیس اہلکار کے درمیان ہونے والی گفتگو ریکارڈ کریں گے جبکہ اس سے بنی ویڈیوز کا مکمل ریکارڈ روزانہ کی بنیاد پر زونل ایس پی کے دفتر میں محفوظ رکھا جائے گا ، وزیر داخلہ نےاسلام آباد پولیس کے اس اقدام کی تعریف بھی کی۔

Pakistan ready to host Bangladesh at home ground after 11 years

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *